If my questions are answered today, I will become a Muslim now || dr zakir naik


0
If my questions are answered today, I will become a Muslim now || dr zakir naik



If my questions are answered today, I will become a Muslim now || dr zakir naik
A medical doctor by professional training, Dr Zakir Naik is renowned as a dynamic international orator on Islaam and Comparative Religion. He is the President of Islaamic Research Foundation International. He is 54 years old. Dr Zakir clarifies Islaamic viewpoints and clears misconceptions about Islaam, using the Qur’aan, authentic Hadith and other religious Scriptures as a basis, in conjunction with reason, logic and scientific facts. He is popular for his critical analysis and convincing answers to challenging questions posed by audiences after his public talks.

In the last 24 years Dr Zakir Naik has delivered over 2,000 public talks in the USA, Canada, UK, Italy, France, Turkey, Saudi Arabia, UAE, Kuwait, Qatar, Bahrain, Oman, Egypt, Yemen, Australia, New Zealand, South Africa, Botswana, Nigeria, Ghana, Gambia, Algeria, Morocco, Sri Lanka, Brunei, Malaysia, Singapore, Indonesia, Hong Kong, China, Japan, South Korea, Thailand, Guyana (South America), Trinidad, Mauritius, Maldives and many other countries, in addition to numerous public talks in India. In April 2012, his public talk in Kishanganj, Bihar, in India was Alhamdulillah attended by over one million people being one of the largest gathering in the world for any religious lecture by a single orator.

Amongst the billion plus population of India Alhamdulillah Dr Zakir Naik was ranked No. 82 in the ‘100 Most Influential People in India’ list published by Indian Express in the year 2009 and ranked No. 89 in 2010. He was ranked No. 3 in the ‘Top 10 Spiritual Gurus of India in 2009’ and topped this list in 2010. He is ranked in the top 70 list of the ‘500 Most Influential Muslims in the World’ published by Georgetown University in the last 10 editions from 2011 to 2020. In the list of The Top 100 Cumulative Influence over 10 years Dr Zakir was ranked No. 79.

By Allaah’s help, he has successfully participated in several symposia and dialogues with prominent personalities of other faiths. His public dialogue with Dr William Campbell (of USA) on the topic “The Qur’aan and the Bible in the light of Science” held in Chicago, USA, in April, 2000 was a resounding success. His inter-faith Dialogue with prominent Hindu Guru Sri Sri Ravi Shankar on the topic “The Concept of God in Hinduism and Islaam in the light of Sacred Scriptures” held at Palace Grounds, Bangalore, on 21st Jan. 2006, was highly appreciated by people of both the faiths.

Shaikh Ahmed Deedat, the world famous orator on Islaam and Comparative Religion, who had called Dr Zakir “Deedat Plus” in 1994, presented a plaque in May 2000 with the engraving “Awarded to Dr Zakir Abdul Karim Naik for his achievement in the field of Da’wah and the study of Comparative Religion”. “Son what you have done in 4 years had taken me 40 years to accomplish, Alhamdulillaah”.
Dr Zakir Naik appears regularly on many international TV channels in more than 175 countries of the world. More than a hundred of his talks, dialogues, debates and symposia are available on DVDs. He has authored many books on Islaam and Comparative Religion.
i use Footage And image | Credit
videoblocks
shutterstock
videos.pexels
videvo
unsplash
pixabay
Background Music Credit: Youtube Music library
All credit for contents used in this video goes to the right owner.
FAIR-USE COPYRIGHT Disclaimer
This video meant for educational purpose only we not own any copyrights all the rights go to their respective owners.

Copyright Disclaimer Under Section 107 of the Copyright Act 1976, allowance is made for “fair use” for purposes such as criticism, comment, news reporting, teaching, scholarship, and research. Fair use is a use permitted by copyright statute that might otherwise be infringing. Non-profit, educational or personal use tips the balance in favor of fair use.
DISCLAIMER: This Channel DOES NOT Promote or encourage Any illegal activities , all contents provided by This Channel is meant for EDUCATIONAL PURPOSE only .

Copyright Disclaimer : Under Section 107 of the Copyright Act 1976, allowance is made for “fair use” for purposes such as criticism, comment, news reporting, teaching, scholarship, and research. Fair use is a use permitted by copyright statute that might otherwise be infringing. Non-profit, educational or personal use tips the balance in favor of fair use.
Question’s Eye Solve
1) dr zakir naik
2) dr zakir naik 2020
3) zakir naik
4) zakir naik 2020
5) dr zakir naik 2020 urdu
6) dr.zakir naik
7) DR Zakir Naik urdu/hindi 2020
8) dr zakir naik question answer
9) Ham Dam
#drzakirnaikbangla
#drzakirnaikhindi
#drzakirnaikbanglalecture
#drzakirnaikurdu
#drzakirnaiklecture
#drzakirnaikbayan
#drzakirnaikenglishlecture
#drzakirnaikvideo
#drzakirnaikaapkiadalat
#questionsandanswers
#questionsforkids
#questionsintelugu
#todaynews
#todaybiggbosspromo
#todaygoldrate
#muslimsongs
#muslimcouplewhatsapp status
#muslimwedding

source


Like it? Share with your friends!

0

What's Your Reaction?

hate hate
0
hate
confused confused
0
confused
fail fail
0
fail
fun fun
0
fun
geeky geeky
0
geeky
love love
0
love
lol lol
0
lol
omg omg
0
omg
win win
0
win
Ham Dam

29 Comments

Your email address will not be published. Required fields are marked *

  1. It is materialism that Bhagwat Gita tells to stay away from.
    Unfortunately very few people understand it.
    Where Islam ends knowledge of bhagwat gita starts.
    Islam does a great job in spreading their knowledge, unfortunately same isnt true with Hinduism or Sanatam Dharma.

  2. اَلسَّلاَمْ عَلَيْـــــــــــــكُمْ وَ رَحْمَةُ اللَّهِ وَ بَرَكَاتُهُ
    مسجد اقصی کی مختصر تاریخ و تعارف;
    مسجد اقصی مسلمانوں کا قبلہ اول اور خانہ کعبہ اورمسجد نبوی کے بعد تیسرا مقدس ترین مقام ہے۔مقامی مسلمان اسے المسجد الاقصیٰ یا حرم قدسی شریف )عربی: الحرم القدسی الشریف( کہتے ہیں۔ یہ مشرقی یروشلم میں واقع ہے جس پر اسرائیل کا قبضہ ہے۔ یہ یروشلم کی سب سے بڑی مسجد ہے جس میں 5 ہزار نمازیوں کی گنجائش ہے جبکہ مسجد کے صحن میں بھی ہزاروں افراد نماز ادا کرسکتے ہیں۔ 2000ء میں الاقصیٰانتفاضہ کے آغاز کے بعد سے یہاں غیر مسلموں کا داخلہ ممنوع ہے۔حضرت محمد صلی اللہ علیہ و آلہ وسلم سفر معراج کے دوران مسجد حرام سے یہاں پہنچے تھے اور مسجد اقصیٰ میں تمام انبیاء کی نماز کی امامت کرنے کے بعد براق کے ذریعے سات آسمانوں کے سفر پر روانہ ہوئے۔قرآن مجید کی سورہ الاسراء میں اللہ تعالٰی نے اس مسجد کا ذکرکا ذکر ان الفاظ میں کیا ہے:”پاک ہے وہ ذات جو اپنے بندے کورات ہی رات میں مسجد حرام سے مسجد اقصی لے گئی جس کے آس پاس ہم نے برکت دے رکھی ہے اس لئے کہ ہم اسے اپنی قدرت کے بعض نمونے دکھائيں یقینا اللہ تعالٰی ہی خوب سننے والا اوردیکھنے والا ہے )سورہ الاسراء آیت نمبر 1(“احادیث کے مطابق دنیا میں صرف تین مسجدوں کی جانب سفر کرنا باعث برکت ہے جن میں مسجد حرام، مسجد اقصٰی اور مسجد نبوی شامل ہیں۔حضرت ابوذر سے حدیث مروی ہے کہ”میں نے رسول اکرم صلی اللہ علیہ و آلہ و سلم سے پوچھا کہ زمین میں سب سے پہلے کون سی مسجد بنائی گئی؟تو نبی صلی اللہ علیہ و آلہ و سلم نے فرمایا : مسجد حرام ) بیت اللہ ( تو میں نے کہا کہ اس کے بعد کونسی ہے ؟ تو نبی صلی اللہ علیہ و آلہ و سلم فرمانے لگے : مسجد اقصیٰ ، میں نے سوال کیا کہ ان دونوں کے درمیان کتنا عرصہ ہے ؟ تو نبی صلی اللہ علیہ و آلہ و سلم نے فرمایاکہ چالیس سال، پھرجہاں بھی تمہیں نماز کا وقت آجائے نماز پڑھ لو کیونکہ اسی میں فضیلت ہے ۔ )صحیح بخاری حدیث نمبر 3366، صحیح مسلم حدیث نمبر 520(مسجد اقصیٰ مسلمانوںکا قبلۂ اول ہے اور معراج میں نماز کی فرضیت 16 سے 17 ماہ تک مسلمان مسجد اقصٰی کی جانب رخ کرکے ہی نماز ادا کرتے تھے پھر تحویل قبلہ کا حکم آنے کے بعد مسلمانوں کا قبلہ خانہ کعبہ ہوگیا۔جب عمر فاروق ؓ کے دور میں مسلمانوں نے بیت المقدس فتح کیا تو حضرت عمر ؓ نے شہر سے روانگی کے وقت صخرہ اور براق باندھنے کی جگہ کے قریب مسجد تعمیر کرنے کا حکم دیا جہاں انہوں نے اپنے ہمراہیوں سمیت نماز ادا کی تھی۔ مسجد اقصٰی سے بالکل قریب ہونے کی وجہ سے یہی مسجد بعد میں مسجد اقصٰی کہلائیکیونکہ قرآن مجید کی سورہ بنی اسرائیل کے آغاز میں اس مقام کو مسجد اقصٰی کہا گیا ہے۔اس دور میں بہت سے صحابہ نے تبلیغ اسلام اور اشاعت دین کی خاطر بیت المقدس میں اقامت اختیار کی۔مسجداقصٰی کا بانی حضرت یعقوب کو مانا جاتا ہے اور اسکی تجدید حضرت سلیمان نے کی۔بعد میںخلیفہ عبد الملک بن مروان نے مسجد اقصٰی کی تعمیر شروع کرائی اور خلیفہ ولید بن عبد الملک نے اس کی تعمیر مکمل کی اور اس کی تزئین و آرائش کی۔ عباسی خلیفہ ابو جعفر منصور نے بھی اس مسجد کی مرمت کرائی۔پہلی صلیبی جنگ کے بعد جب عیسائیوں کا بیت المقدس پر قبضہ ہو گیا تو انہوں نے مسجد اقصٰیمیں بہت رد و بدل کیا۔ انہوں نے مسجد میں رہنے کے لیے کئی کمرے بنا لیے اور اس کا نام معبد سلیمان رکھا، نیز متعدد دیگر عمارتوں کا اضافہ کیا جو بطور جائے ضرورت اور اناج کی کوٹھیوں کے استعمال ہوتی تھیں۔ انہوں نے مسجد کے اندر اور مسجد کے ساتھ ساتھ گرجا بھی بنا لیا۔ سلطان صلاح الدین ایوبی نے 2 اکتوبر 1187ء کو فتح بیت المقدس کے بعد مسجد اقصٰی کو عیسائیوں کے تمام نشانات سے پاک کیا اور محراب اور مسجد کو دوبارہ تعمیر کیا۔مسجد اقصی کے نام کا اطلاق پورے حرم قدسی پر ہوتا تھا جس میں سب عمارتیں جن میں اہم ترین قبۃ الصخرۃ ہے جو اسلامی طرز تعمیر کے شاندار نمونوں میں شامل ہے ۔ تاہم آجکل یہ نامحرم کے جنوبی جانب والی بڑی مسجد کے بارے میں کہا جاتا ہے ۔وہ مسجد جو نماز کی جگہ ہے وہ قبۃ الصخرۃ نہیں، لیکن آج کل قبہ کی تصاویر پھیلنے کی بنا پر اکثر مسلمان اسے ہی مسجد اقصیٰ خیال کرتے ہيں حالانکہ فی الواقع ایسی کوئی بات نہیں مسجد تو بڑے صحن کے جنوبی حصہ میں اور قبہ صحن کے وسط میں ایک اونچی جگہ پرواقع ہے۔زمانہ قدیم میں مسجد کا اطلاق پورے صحن پر ہوتا تھا اور اس کی تائيد امام ابن تیمیہ کے اس بیان سے بھی ہوتی ہے کہ:”مسجد اقصی اس ساری مسجد کا نام ہے جسے سليمان علیہ السلام نے تعمیر کیا تھا اور بعضلوگ اس مصلی یعنی نماز پڑھنے کی جگہ کو جسے عمر بن خطاب رضی اللہ تعالٰی عنہ نےاس کی اگلی جانب تعمیر کیا تھا اقصی کا نام دینے لگے ہیں، اس جگہ میں جسے عمربن خطاب رضي اللہ تعالٰی عنہ نے تعمیر کیا تھا نماز پڑھنا باقی ساری مسجد میں نماز پڑھنے سے افضل ہے۔“بیت المقدس 1 اگست 1967 کو اسرائیلی قبضے میں چلا گیا جو آج تک جاری ہے۔21 اگست 1969ء کو ایک آسٹریلوی یہودی ڈینس مائیکل روحان نے قبلۂ اول کو آگ لگا دی جس سے مسجد اقصیٰ تین گھنٹے تک آگ کی لپیٹ میں رہی اور جنوب مشرقی جانب عین قبلہ کی طرف کا بڑا حصہ گر پڑا۔ محراب میں موجود منبر بھی نذر آتش ہوگیا جسے صلاح الدین ایوبی نے فتح بیت المقدس کے بعد نصب گیا تھا۔ صلاح الدین ایوبی نے قبلہ اول کی آزادی کے لئے تقریبا 16 جنگیں لڑیں اور ہر جنگ کے دوران وہ اس منبر کو اپنے ساتھ رکھتے تھے تا کہ فتح ہونے کے بعد اس کو مسجد میں نصب کریں۔اس المناک واقعہ کے بعد خواب غفلت میں ڈوبی ہوئی امت مسلمہ کی آنکھ ایک لمحے کے لئے بیدار ہوئی اور سانحے کے تقریبا ایک ہفتے بعد اسلامی ممالک نے موتمر عالم اسلامی )او آئی سی( قائم کر دی۔یہودی اس مسجد کو ہیکل سلیمانی کی جگہ تعمیر کردہ عبادت گاہ سمجھتے ہیں اور اسے گرا کر دوبارہ ہیکل سلیمانی تعمیر کرنا چاہتے ہیں حالانکہ وہ کبھی بھی بذریعہ دلیل اس کو ثابت نہیں کرسکے کہ ہیکل سلیمانی یہیں تعمیر تھا۔

  3. Is pagal aadmi ne bola marriage ek contract h agar aisa h to ek zism bechne waali bhi to contract krti h ek ghante ka samajh lo ya 1 din ka ya or jyada ka
    To kya fark rah gya shaadi me or zism k dhande me

  4. Thanks sir for your kind, humanity's solushan…. इस व्हिडिओ से एक बहुत काम की बात पता चली …हैं…की सवाल पूछने वाला….पुरा ज्ञानी होना चाहिए….जकिर सर आपको… तहे दिलं से सलाम…. मान गये सर आपको, आपने….हर एक आदमी के लिये इंसानियात की ,बात कही…हैं….व्वा…लाजवाब सर.

  5. आप कहते हैं ऊपरवाला एक ही है मैं उस मे विश्वास रखता हूं तो देश छोड़कर भागने की जरूरत क्या पड़ी

  6. Question .. Siya Suni Musalman main fark kyon kiya jata h ..
    Question :- Ksab ne Logo ko marne se phle Allah hu akbar kyu bola ? kya Allah ne use Marne k liye esa bola tha ya Quran main Logo ko marne ki baat likhi h ..

  7. es question krny waly bndy ko koi ye pochy k agr talak nhi honi chahiye or apk religion ma b nhi ha tu phr country law ma divorce q start kiya ha?

  8. /آج کی ویڈیو اپ لوڈ ہو چکی زبردست ویڈیو ہے وزٹ کریں اگر ویڈیو پسند آئے تو پلیز چینل کو ضرور سبسکرائب کردیجئے ،شکریہ جی تمام محبت دینے والوں کا

  9. /آج کی ویڈیو اپ لوڈ ہو چکی زبردست ویڈیو ہے وزٹ کریں اگر ویڈیو پسند آئے تو پلیز چینل کو ضرور سبسکرائب کردیجئے ،شکریہ جی تمام محبت دینے والوں کا

Choose A Format
Personality quiz
Series of questions that intends to reveal something about the personality
Trivia quiz
Series of questions with right and wrong answers that intends to check knowledge
Poll
Voting to make decisions or determine opinions
Story
Formatted Text with Embeds and Visuals
List
The Classic Internet Listicles
Countdown
The Classic Internet Countdowns
Open List
Submit your own item and vote up for the best submission
Ranked List
Upvote or downvote to decide the best list item
Meme
Upload your own images to make custom memes
Video
Youtube, Vimeo or Vine Embeds
Audio
Soundcloud or Mixcloud Embeds
Image
Photo or GIF
Gif
GIF format