Where did this cruel girl get such a difficult question from in front of Dr. Zakir Naik?


0
Where did this cruel girl get such a difficult question from in front of Dr. Zakir Naik?



Where did this cruel girl get such a difficult question from in front of Dr. Zakir Naik?
A medical doctor by professional training, Dr Zakir Naik is renowned as a dynamic international orator on Islaam and Comparative Religion. He is the President of Islaamic Research Foundation International. He is 54 years old. Dr Zakir clarifies Islaamic viewpoints and clears misconceptions about Islaam, using the Qur’aan, authentic Hadith and other religious Scriptures as a basis, in conjunction with reason, logic and scientific facts. He is popular for his critical analysis and convincing answers to challenging questions posed by audiences after his public talks.

In the last 24 years Dr Zakir Naik has delivered over 2,000 public talks in the USA, Canada, UK, Italy, France, Turkey, Saudi Arabia, UAE, Kuwait, Qatar, Bahrain, Oman, Egypt, Yemen, Australia, New Zealand, South Africa, Botswana, Nigeria, Ghana, Gambia, Algeria, Morocco, Sri Lanka, Brunei, Malaysia, Singapore, Indonesia, Hong Kong, China, Japan, South Korea, Thailand, Guyana (South America), Trinidad, Mauritius, Maldives and many other countries, in addition to numerous public talks in India. In April 2012, his public talk in Kishanganj, Bihar, in India was Alhamdulillah attended by over one million people being one of the largest gathering in the world for any religious lecture by a single orator.

Amongst the billion plus population of India Alhamdulillah Dr Zakir Naik was ranked No. 82 in the ‘100 Most Influential People in India’ list published by Indian Express in the year 2009 and ranked No. 89 in 2010. He was ranked No. 3 in the ‘Top 10 Spiritual Gurus of India in 2009’ and topped this list in 2010. He is ranked in the top 70 list of the ‘500 Most Influential Muslims in the World’ published by Georgetown University in the last 10 editions from 2011 to 2020. In the list of The Top 100 Cumulative Influence over 10 years Dr Zakir was ranked No. 79.

By Allaah’s help, he has successfully participated in several symposia and dialogues with prominent personalities of other faiths. His public dialogue with Dr William Campbell (of USA) on the topic “The Qur’aan and the Bible in the light of Science” held in Chicago, USA, in April, 2000 was a resounding success. His inter-faith Dialogue with prominent Hindu Guru Sri Sri Ravi Shankar on the topic “The Concept of God in Hinduism and Islaam in the light of Sacred Scriptures” held at Palace Grounds, Bangalore, on 21st Jan. 2006, was highly appreciated by people of both the faiths.

Shaikh Ahmed Deedat, the world famous orator on Islaam and Comparative Religion, who had called Dr Zakir “Deedat Plus” in 1994, presented a plaque in May 2000 with the engraving “Awarded to Dr Zakir Abdul Karim Naik for his achievement in the field of Da’wah and the study of Comparative Religion”. “Son what you have done in 4 years had taken me 40 years to accomplish, Alhamdulillaah”.
Dr Zakir Naik appears regularly on many international TV channels in more than 175 countries of the world. More than a hundred of his talks, dialogues, debates and symposia are available on DVDs. He has authored many books on Islaam and Comparative Religion.
i use Footage And image | Credit
videoblocks
shutterstock
videos.pexels
videvo
unsplash
pixabay
Background Music Credit: Youtube Music library
All credit for contents used in this video goes to the right owner.
FAIR-USE COPYRIGHT Disclaimer
This video meant for educational purpose only we not own any copyrights all the rights go to their respective owners.

Copyright Disclaimer Under Section 107 of the Copyright Act 1976, allowance is made for “fair use” for purposes such as criticism, comment, news reporting, teaching, scholarship, and research. Fair use is a use permitted by copyright statute that might otherwise be infringing. Non-profit, educational or personal use tips the balance in favor of fair use.
DISCLAIMER: This Channel DOES NOT Promote or encourage Any illegal activities , all contents provided by This Channel is meant for EDUCATIONAL PURPOSE only .

Copyright Disclaimer : Under Section 107 of the Copyright Act 1976, allowance is made for “fair use” for purposes such as criticism, comment, news reporting, teaching, scholarship, and research. Fair use is a use permitted by copyright statute that might otherwise be infringing. Non-profit, educational or personal use tips the balance in favor of fair use.
Question’s Eye Solve
1) dr zakir naik
2) dr zakir naik 2021
3) zakir naik
4) zakir naik 2021
5) dr zakir naik 2021 urdu
6) dr.zakir naik
7) DR Zakir Naik urdu/hindi 2021
8) dr zakir naik question answer
9) Ham Dam
10)dr zakir naik question answer 2021

source


Like it? Share with your friends!

0

What's Your Reaction?

hate hate
0
hate
confused confused
0
confused
fail fail
0
fail
fun fun
0
fun
geeky geeky
0
geeky
love love
0
love
lol lol
0
lol
omg omg
0
omg
win win
0
win
Ham Dam

31 Comments

Your email address will not be published. Required fields are marked *

  1. بگ بینگ Big Bang کا نظریہ
    صحیح نہیں ہے

    اس وقت بگ بینگ Big Bang پر اجماع نہیں ہے بلکہ سائنسدانوں ( Physicists ) کے درمیان اس میں اختلاف پایا جاتا ہے ۔
    بعض سائنسداں کہتے ہیں کہ If there is before then big bang does not matter . یعنی بگ بینگ سے پہلے کوئی چیز ہے تو بگ بینگ کے کوئی معنی نہیں ہے ۔
    اب یہ نظریہ پیش کیا جاچکا ہے کہ یہ کائنات
    متعدد کائناتون ( Multiverse) ایک کائنات سے نکلی ہے ۔ ہماری کائنات ایک بچہ یونیورس ہے ۔ اخبارات میں یہ رپورٹ آ چکی ہے کہ :
    Scientists turned down the Big Bang
    یہ بات Bicep 2 میں کام کرنے والے
    سائسندانوں کی حالیہ خلائی تحقیق کی روشنی میں کہی گئی ہے ۔

    جس نظریہ کے بارے میں اتنا اختلاف ہو اور جو ایک ناقص اور مخلتف فیہ ںظریہ ہے اس کے بارے میں یہ کہنا سورہ انبیاء کی آیہ ٣٠ میں بگ بینگ کو بیان کیا گیا ہے صحیح نہیں ہے
    کسی ناقص اور ظنی ( غیر یقینی) نظریہ کی اللہ جل شانہ کی ذات کی طرف نسبت بہت غلط بات ہے اور گستاخی ہے ۔

    اب سوال یہ پیدا ہوتا ہے کہ جب " سموات " اور " ارض " ملے ہوئے تھے تو اللہ جل شانہ نے ان کو الگ کیسے کیا ؟ تو اس سوال کا جواب یہ دیا جائے گا کہ ہمیں اس کا علم نہیں ہے ۔
    اللہ جل شانہ کا ارشاد ہے کہ :

    بديع السموات والأرض إذا قضى أمرا فإنما يقول له كن فيكون ( البقرة : ١١٧)

    (الله) آسمانوں اور زمین کا مبدع ہے جب وہ کسی چیز کا فیصلہ کرتا ہے تو اس کے لیے صرف اتنا کہنا کافی ہوتا ہے کہ ہو جا تو وہ ہوجاتی ہے ۔
    کائنات کیسے معرض وجود میں آئی اس پر اب بھی تحقیقات ہورہی ہیں

    نومبر 2021 میں ناسا جیمس ویب ٹیلسکوپ JWST لانچ کرنے جارہا ہے جو زمین سے 5 ۔1 ملیون کے فاصلہ پر جا کر کام کرے گا ۔ یہ اب تک کا تکنیکی طور پر سب سے زیادہ ترقی یافتہ ٹیلسکوپ ہے ۔ وہ ایسے data بھیج سکتا ہے جس سے ہوسکتا ہے کہ آغاز کائنات کے بارے میں کوئی نئی تحقیق سامنے آئے ۔

    DR.MOHAMMAD LAEEQUE NADVI
    Ph.D. (Arabic Lit.) M.A. Arabic Lit.

    Director
    Amena Institute of Islamic Studies
    And Analysis
    A Global & Universal Research Institute
    Donate to promote this Institute
    SBI A/C30029616117
    Kolkata,Park Circus Branch

    nadvilaeeque@gmail.com
    Thanks

  2. May creator in Holy Bible let Dr. Zakir Naik be experienced Paul who in Bible newtextment has individual to meet Jesus Christ the only way , Truth, Life. Bible Book John 1:1 said (in the beginning was the Word, and the Word was with God, and the Word was God) in Jesus Christ name I pray

  3. ٹیلسکوپ کا اصل موجد کون ہے ؟
    عباسی عہد خلافت میں فلکیاتی ترقیات

    بغداد سے ایک مشہور و معروف ادبی و علمی مجلہ ' الأقلام ' نكلتا تھا ۔ اس میں ایک مفصل مضمون ' المراصد الفکیہ فی العہد العباسی '
    یعنی عباسی عہد فلکی مراصد (Observatories ) تھا ۔ اس میں سے مختصر اقتباس درج ذیل ہے :

    أيام ازدهار العرب فى الفلك فى العصر العباسي
    المراصد الفلكية ببغداد

    مرصد المأمون فى الشماسية ببغداد
    قال عنه البعض أنه اول رصد بنى فى الإسلام الشماسية ببغداد
    دار الرصد المأمونى بأعلى بغداد الشرقية
    إحدى محلات الاعظمية اليوم سنة ٢١٤هجرية . ورصدا آخر فى الشام و ذلك فى سنة ٢١٥ هجرية ۔ إن كثيرا من كتب الفلك العربية نقلت إلى اللاطينية و الفرنسية و الإيطالية . و يذكر كاجورى Cajori آن اكتشاف بعض الخلل في حركة القمر يعزى إلى ابى الوفاء ولیس إلى الفللكى ' بتخوبراهى' الدنماركي .

    المرصد الحاكمى بالقاهرة و مرصد بن الشاطر و مرصد البستان بالشام و مرصد الدينورى و دار المرصد بمراغة
    و كان الدينورى عالما بعلم الهيئة و صنعة آلات الإرصاد — و صناعة الأصطرلاب و الآلات الرصدية غاية الإحكام .

    الأقلام ، الجزء السابع – السنة الثالثة
    ذو الحجة ١٣٨٦ هجرية مارس ١٩٦٧ م

    یہ مضمون مارچ 1967 مین شائع ہوا تھا ۔ مامون کے عہد میں یہ مراصد بنائے گئے تھے
    اس میں لکھا ہے کہ دینوری فلکیاتی سائنسداں تھا جو فلکیات کے مشاہدہ کے آلات اور ٹیلیسکوب بنانے میں ماہر تھا اور اسے اس میدان میں بڑی فنی مہارت حاصل تھی ۔
    اس تاریخی حقیقت کو دنیا میں کتنے لوگ جانتے ہیں؟

    عام طور پر ٹیلیسکوپ کا موجد گلیلیو ( م 1462) کو سمجھا جاتا ہے ۔ یہ بالکل غلط ہے صحیح یہ کہ ابو اسحاق ابراہیم بن جندب ( م 767) دور کی چیزوں کو دیکھنے کے لیے کچھ اصول اخذ کیے اور اس کے مطابق ایک دور بینی الہ اہجاد کیا ۔ یوروپ میں ٹیلیسکوپ ( Telescope) عربوں کے ذریعہ پہنچا ۔ اس وقت اہل یوروپ یہ آلہ کو سمجھ ہی نہیں سکے کہ یہ کیا ہے !!

    گلیلیو نے جو اصطرلاب یوروپ میں پہنچا تھا اس کو ترقی دی ۔ یہ فن آ گے بڑھتا رہا یہاں تک کہ جدید ترین ترقی یافتہ ریڈیو ٹیلیسکوپ تک پہنچا ۔
    اندلس میں ، اموی حکومت میں جدید سائنسی تحقیقات ہوئیں اور سائنس و ٹکنالوجی میں بہت ترقیات ہوئین تھیں ۔
    یوروپ اس وقت دور جہالت میں زندگی گزار رہا تھا ۔ یوروپ کے لوگ یہاں آکر زانوے تلمذ تہ کر تے تھے ۔ انہون نے اندلس کے درسگاہوں میں تعلیم حاصل کرکے ترقی کرنا شروع کیا تھا ۔

    ایک جرمن اسکالر ڈاکٹر زیگرڈ ہبنکہ نے ایک کتاب لکھی ہے جس کا عنوان ہے
    ' شمس العرب تسطع علی اوربا ' اثر الحضارة العربية على أوربا ' .
    ' عربى تہذیب کے اثرات یوروپ پر ' یہ ایک جرمن خاتون اسکالر ہین ۔ انہوں نے بڑی تفصیل
    کے ساتھ یوروپ پر اہل عرب کے علمی اثرات اور ان کی ترقیات میں ان اثرات کا ذکر کیا ہے ۔

    یہ ایک اہم موضوع پے اور اہل علم اس سے اچھی طرح واقف ہیں ۔ اس موضوع پر ترکی کے پروفیسر فؤاد سزگین کی تحقیق بہت اہم ہے ۔ دار المصنفین نے ان کی وفات کے موقع پر
    جو اایک مفصل مضمون شائع کیا ہے اس میں
    مرحوم فواد سزگین کے اس تاریخی کارنامے کو اجاگر کیا ہے ۔

    ڈاکٹریٹ کے مقالہ لکھنے کے دوران کتنی باتیں ایسی میری نظر سے گزریں جن کو مسلمان اہل علم یوروپی علماء کے کارنامے بتاتے ہیں جبکہ وہ خود عرب مسلمانوں کے علمی کارنامے ہیں ۔

    آج اگر امہ مسلمہ علوم و فنون کے میدانوں میں بچھڑی ہوئی ہے تو اس کے پیچھے بھی یہودی صلیبی سازش ہی کار فرما ہے ۔ مسلمانوں کو اس حالت میں پہنچانے کے مجرمانہ عمل کے وہی ذمہ دار ہیں ۔ یہ مختصر تحریر ہے امید ہے قارئین کے لیے معلوماتی اور مفید ہوگی ۔

    ڈاکٹر محمد لئیق ندوی قاسمی

    ڈائرکٹر آمنہ انسٹیٹیوٹ آف اسلامک اسٹڈیز اینڈ انالائسس
    A Global and Universal Research Institute
    nadvilaeeque@gmail.com
    Thanks

  4. इस लड़की के आस पास.. ये मुस्लिम औरतें क्या कर रहीं हैं, क्यों खड़ी हैं..???

    क्योंकि जो चाहे सिर्फ वो सुना और दिखा सकें..?

  5. Adam was not the first human being but several Adams was there. Eve's name is not there in Quran.
    Mankind went into the evolution and came to its present form about over a hundred years ago.

Choose A Format
Personality quiz
Series of questions that intends to reveal something about the personality
Trivia quiz
Series of questions with right and wrong answers that intends to check knowledge
Poll
Voting to make decisions or determine opinions
Story
Formatted Text with Embeds and Visuals
List
The Classic Internet Listicles
Countdown
The Classic Internet Countdowns
Open List
Submit your own item and vote up for the best submission
Ranked List
Upvote or downvote to decide the best list item
Meme
Upload your own images to make custom memes
Video
Youtube, Vimeo or Vine Embeds
Audio
Soundcloud or Mixcloud Embeds
Image
Photo or GIF
Gif
GIF format